24

ریلوے اسٹیشن صفدر آباد ناقص انتظامات ‘ مسافروں کو شدیدپریشانی

صفدرآباد(نامہ نگار)ریلوے اسٹیشن صفدرآ باد مسافروں کے لئے بڑی مصیبت اور خطرہ بن گیا۔نوجوان سارا دن اسٹیشن پر کرکٹ کھیلنے لگے اورموبائل پکڑ کر راہ چلتی خواتین کی تصاویر بنانے لگے۔ٹرین کے اوقات میں بھی یہ لڑکے باز نہیں آتے اور پلیٹ فارم پر کرکٹ کھیلنے میں مصروف رہتے ہیں ،کوئی ان کو منع کرنے والا نہیں ۔گیندیں مسافروں کو زخمی کر دیتی ہیں اور جو بھی مسافر انہیں بد تمیزی پر روکتا ہے اسے جھاڑ پلا دیتے ہیں۔بعض مواقع پر اگر کسی مسافر نے اسٹیشن ماسٹر سے اس کی شکایات بھی کیں تو وہ اپنے کمرے میں جا گھستا ہے۔پتہ چلا ہے کہ ریلوے ملازمین بھی اس رویہ سے تنگ ہیںاور مکمل خا موشی اختیار کر چکے ہیں۔خواتین اور مسافر سب اپنی اپنی جگہ پر پریشان ہیں اور ان کی تکالیف کا مداوا کرنے والا کوئی بھی نہیں۔ڈی ایس لاہور بھی سنی ان سنی کر دیتے ہیں ،ریلوے پولیس کا نامو نشان نظر نہیں آتا ،میڈیا میں سینکڑوں بار خبریں شائع کروائی جا چکی ہیں لیکن کوئی اثر نہیں ہوتا ۔لگتا ہے کہ ریلوے افسران کو عوام کی خدمت کا کوئی احساس نہیں اور مقامی عملہ تو بادشاہ بنا بیٹھا ہے۔دو ہی تو ٹرینیں اس روٹ پر چلتی ہیں ایک بدر اور دوسری غوری ایکسپریس ۔یہ گاڑیاں عوام کی سفری سہولتوں کو بالکل پورا نہیں کر پا رہیں۔ضرورت اس بات کی ہے کہ لاہور تا فیصل آباد روٹ پر مزید گاڑیاں چلائی جائیں۔وفاقی وزیرریلوے صفدرآباد کا دورہ کریںاور کھلی کچہری لگا کر مسافروں کی شکایات سن کر ان کا ازالہ فرمائیںاور مہربانی کرتے ہوئے صفدرآباد میں تیز رفتار ٹرینوں میں سے کسی گاڑی کا سٹاپ منظور کرنے کا اعلان کر کے عوام کی خدمت کا حق ادا کریں۔صفدرآباد کو فوری اپ گریڈ کیا جائے اور پولیس چوکی قائم کی جائے تا کہ شر پسند عناصرپر ہاتھ ڈالا جا سکے،یہ بھی شکایات سامنے آ رہی ہیں کہ سکول کی چھٹی کے اوقات میں سماج دشمن لڑ کے ہاتھوں میں کیمرے والے موبائل فون لئے بچیوں کو ہراساں بھی کرتے ہیں اس کا نوٹس لیا جائے۔میڈیا کا کام تو برائی کا قلع قمع کرنا اور نشان دہی ہے آگے کا کام افسران کا ہے،وہ جانے اور عوام جانیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں