31

شرح سود میں اضافہ نے کاروباری افرادکی مشکلات بڑھا دیں

فیصل آباد (سٹاف رپورٹر) صدر فوڈ بورڈ، چیئر مین کنفیکشنری ایسوسی ایشن حاجی نعیم احمدنے واضح طور پر مانیٹری پالیسی کو ملک کی معاشی تاریخ کی بدترین مانیٹری پالیسی قرار دیا ہے اور پیشن گوئی کی ہے کہ اس سے معاشی، تجارتی، انوسیمنٹ اور کمرشل سرگرمیاں رک جائیں گی اوریہ حالات پاکستان کی کاروباری، صنعتی اور تاجر برادری کے لیے مکمل تباہی کا منظرنامہ پیش کررہے ہیں۔انہوں نے اس بات پر زوردیا کہ پاکستان اب تقریبا پورے خطے میں کاروباری سرمائے تک رسائی اور کاروبار کرنے کی لاگت کے لحاظ سے اب بد ترین ممالک میں سے ایک بن چکا ہے اور ایک بار پھر حکومت نے کاروباری برادری سے مشاورت کے بغیر معاشی پالیسی سازی کی اپنی قابل مذمت روایت کو برقرار رکھا ہے۔ اکانومی کے حقیقی اسٹیک ہولڈرز کو ایک بار پھر نظر انداز کر دیا گیا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں