23

فیس میں اضافہ کی افواہ’ پاسپورٹ دفاتر میں رش

لاہور(بیوروچیف) نئے اور تجدید شدہ پاسپورٹ کے حصول کے لیے شہری رل گئے ، پاسپورٹ آفس میں دھوپ اور گرمی کے دوران طویل قطاریں معمول بن گئیں۔نارمل پاسپورٹ موجودہ صورتحال سے قبل 10روز میں سائل کو مل جاتا تھا جبکہ موجودہ بحرانی صورتحال میں پاسپورٹ ایک ماہ میں بھی نہیں مل رہا، پاسپورٹ کے حصول میں بدترین تاخیر ڈائریکٹوریٹ جنرل امیگریشن اینڈ پاسپورٹس اسلام آباد سے ہو رہی ہے ۔پاسپورٹ دفاتر میں بدترین صورتحال دکھائی دے رہی ہے، شہری نئے اور تجدید شدہ پاسپورٹ کے حصول کے لیے گھنٹوں انتظار کرنے پر مجبور ہیں ۔ذرائع پاسپورٹ سیل کا کہنا ہے کہ پاسپورٹ کے حصول میں تاخیر ڈائریکٹوریٹ جنرل امیگریشن اینڈ پاسپورٹس اسلام آباد سے ہو رہی ہے اس سے قبل سائلین کو 10 سے 12 روز میں نارمل پاسپورٹ مل جایا کرتا تھا، تاہم ایک ماہ گزرنے کے بعد بھی پاسپورٹ کا حصول غیر یقینی کا شکار ہے ، مختلف ممالک کے سفر کے خواہش مند افراد کے علاوہ بیشتر سائلین وہ ہیں جنہوں نے عمرہ پر سعودی عرب روانہ ہونا ہے ، ورک ویزا پر بیرون ممالک ملازمتیں کرنے والے افراد بھی موجودہ صورتحال کی وجہ سے شدید پریشان ہیں۔ذرائع کے مطابق مذکورہ صورتحال ای پاسپورٹ کے اجراء کے بعد پیدا ہوئی، جس کے آغاز کے وقت یہ افواہ اڑائی گئی کہ پاسپورٹ کی فیسوں میں اضافہ متوقع ہے ، ان افواہوں کی وجہ سے پاسپورٹ دفاتر پر شہریوں کا رش بڑھنا شروع ہو گیا اور درخواستوں کی تعداد میں ایک دم اضافہ ہو گیا جوکہ پاسپورٹ آفس کے موجودہ نظام اور اس کے استعداد سے کئی گنا زیادہ تھا جس کی وجہ سے طویل لائنیں معمول بن گئیں۔اس حوالے سے پاسپورٹ ڈائریکٹوریٹ کی جانب سے کئی بار وضاحت دی جا چکی ہے کہ پاسپورٹ کی فیسوں میں کسی قسم کا اضافہ متوقع نہیں ہے ، تاہم اس کے باوجود بھی صورتحال قابو میں نہیں آرہی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں