22

سویا بین کی درآمدات 1.145 بلین ڈالر تک پہنچ گئیں

اسلام آ باد (بیوروچیف) پاکستان کو شدید اقتصادی چیلنجوں کا سامنا ہے خاص طور پر دیہی علاقوں میں آنے والے سیلاب کے بعد زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی کی وجہ سے ملک کی مختلف درآمدات اضافی مالی دباؤ ڈال رہی ہیں۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق اسٹیٹ بینک آف پاکستان (ایس بی پی) کے اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ مالی سال 2021 میں پاکستان کی سویا بین کی درآمدات تقریباً 1.145 بلین ڈالر تک پہنچ گئی، جو کہ گزشتہ سال کی نسبت تقریباً 50 فیصد زیادہ ہے، جو ملک کی سویابین کی فوری طلب کو ظاہر کرتی ہے۔ تاہم مالی سال 2023 کی پہلی سہ ماہی میں، پاکستان کی سویا بین کی درآمدات 269 ملین ڈالرتھیں، جو کہ گزشتہ سال سے تقریباً 18 فیصد کم ہیں، ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر میں کمی سے متاثر ہو سکتے ہیں۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق پاکستان کو سویابین کی پیداوار پر مناسب غور کرنا چاہیے کیونکہ ملک کا سویابین کی درآمدات پر زیادہ انحصار ہے۔ چائنا اکنامک نیٹ ایوب زرعی تحقیقاتی ادارے میں آئل سیڈ سائنٹیسٹ ‘ حافظ سعد بن مصطفی نے کہا کہ ہم درآمدات پر منحصر ہیں،یہ بہت مہنگا ہے جس کی وجہ سے فیڈ، تیل وغیرہ کی قیمتوں میں دن بدن اضافہ ہوتا جا رہا ہے۔ اسے اپنے ملک میں کاشت کی ہماری ضرورت ہے۔ ان کے مطابق پاکستان میں کپاس کے علاوہ تمام فصلیں نان جی ایم او ہیں۔ زیادہ تر غیر ملکی اقسام جو ہم درآمد کرتے ہیں وہ ہلکے علاقوں اور جی ایم او کی ہیں۔ وہ نہ یہاں لگائے جا سکتے ہیں اور نہ ہی یہاں زندہ رہ سکتے ہیں۔ لہٰذا مقامی اقسام کے بیجوں کو کئی گنا بڑھایا جانا چاہیے اور ان ممکنہ شعبوں میں فروغ دیا جانا چاہیے جن کی نشاندہی ہم نے اپنی آزمائشوں اور اپنانے کے قابل مطالعہ سے کی ہے۔ حافظ نے کہا سویا بین زیادہ تر امریکہ، برازیل اور ارجنٹائن جیسے ممالک میں کاشت کی جاتی ہے جہاں معتدل آب و ہوا ہے، اس لیے پاکستان کو اپنی نان جی ایم او سویابین ویریٹیز تیار کرنے کی ضرورت ہے جو زیادہ درجہ حرارت میں اچھی کارکردگی دکھا سکے۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق یونیورسٹی آف ایگریکلچر فیصل آباد (UAF) کی سویا بین بریڈنگ لیب کے انچارج ڈاکٹر ظہیر احمد نے کہا کہ ہم اچھے معیار کے بیج پیدا نہیں کرتے، اور مختلف فصلوں میں بیج کی کل پیداوار بیس فیصد ہے یہ بہت بڑا خلا ہے۔ انہوں نے کہا اس وقت ہم گندم، چاول، کپاس اور سبزیوں کے لیے بھی مختلف فصلوں کے لیے درآمد شدہ بیجوں پر انحصار کرتے ہیں اور یہی حال سویابین کا ہے۔ ہمیں اسے مقامی طور پر تیار کرنا چاہیے۔ ڈاکٹر ظہیر احمد کے مطابق کسان کو مخصوص پلانٹر، ہارویسٹر اور تھریشر کی ضرورت ہوتی ہے۔ مکینائزیشن بہترین طریقوں میں سے ایک ہے جس کے ذریعے ہم سویا بین کی پیداوار میں اضافہ کر سکتے ہیں، اس طرح ہمیں کم محنت، کم وقت اور کم ذخیرہ کرنے کے وقت کی ضرورت ہے۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق پاکستان میں سویا بین کی پیداوار کی تازہ ترین پیشرفت کے بارے میں بات کرتے ہوئے ڈاکٹر ظہیر احمد نے زور دیا کہ اب ان کی توجہ انٹرکراپنگ کے لیے مخصوص سویا بین کو فروغ دینے پر مرکوز ہے، جو کہ چین کی جانب سے اعلیٰ پیداوار دینے والی ٹیکنالوجی ہے۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق ڈاکٹر ظہیر احمد نے کہا کہ بہاولپور کی اسلامیہ یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹر محمد علی رضا جنہوں نے حال ہی میں چین کی سیچوان زرعی یونیورسٹی سے گریجویشن کیا ہے، ان کو مختلف فصلوں کے ساتھ انٹرکراپنگ بالخصوص سویا بین کی انٹرکراپنگ میں مہارت حاصل ہے اور انہوں نے اس ٹیکنالوجی کو پاکستان کے مختلف علاقوں میں موثر انداز میں متعارف کرایا ہے۔ ہم مختلف مراحل اور مختلف ٹیکنالوجیز میں چین کے ساتھ تعاون کر رہے ہیں۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابقحافظ سعد بن مصطفی بھی ڈاکٹر علی کی لائی ہوئی مکئی اور سویا بین انٹرکراپنگ ٹیکنالوجی کو فروغ دینے پر کام کر رہے ہیں اور اس کے امید افزا نتائج حاصل ہوئے ہیں،بہت سے لوگوں کا خیال تھا کہ پاکستان میں سویابین کی کاشت نہیں کی جا سکتی لیکن میں نے ایسا نہیں سوچا۔ ڈاکٹر علی نے میری بات کی تائید کی۔ لوگ سویا بین کی طرف نہیں جا رہے تھے کیونکہ ان کے خیال میں یہ مکئی کے ساتھ مقابلہ ہے۔ تاہم انٹرکراپنگ کے ساتھ، لوگ ایک ہی جگہ پر مکئی اور سویا بین کاشت کر سکتے ہیں۔ پھر ہم نے انٹرکراپنگ مخصوص لائنوں یا اقسام کی نشاندہی کی۔ ہم وہ لائین اکٹر علی کو گزشتہ دو سالوں سے تشخیص کے لیے فراہم کر رہے ہیں۔ پیداوار کا فائدہ روایتی اقسام سے دوگنا یا 2.5 گنا زیادہ ہے۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق حافظ کی رائے میں سویا بین انٹرکراپنگ ٹیکنالوجی پاکستان کے حالات کے مطابق ہے اور امید ہے کہ مزید علاقوں میں اس کا اطلاق ہوگا۔ روایتی چاول کے علاقے یا کپاس کے علاقے ایک مخصوص مدت کے لیے غیر کاشت کیے جاتے ہیں کیونکہ اس وقت کی کوئی فصل اس پر فٹ نہیں آتی۔ ہم نے تقریباً ایک حساب لگایا اور اندازہ لگایا کہ اگر ہم اس قسم کی زمین کا 60 فی صد استعمال کریں تو ہم کم از کم 3 بلین ڈالر سالانہ کا منافع کما سکتے ہیں۔ یہ اس علاقے سے ہے جو غیر کاشت، مفت ہے اور جس پر کسان کچھ کمانے سے قاصر ہیں۔ ہم نے ان علاقوں میں سویا بین کاشت کی ہے۔ دوم، سویا بین ایک پھلی دار پودا ہے۔ یہ ماحولیاتی نائٹروجن کو ٹھیک کرتا ہے کیونکہ اس میں نائٹروجن فکسنگ جڑ نوڈولس ہوتے ہیں۔ اس سے مفت زمین کی زرخیزی کی سطح میں بھی اضافہ ہوگا اور کسانوں کو اگلی فصل کے لیے کم نائٹروجن کی ضرورت ہوگی۔ لہذا، آپ معاشی فائدہ اٹھا رہے ہیں اور سویا بین کی فصلیں حاصل کر رہے ہیں اور زمین کی زرخیزی بھی بہتر ہو رہی ہے۔ تو ہم یہ کر رہے ہیں۔ چائنا اکنامک نیٹ کے مطابق یونیورسٹی آف ایگریکلچر، فیصل آباد میں سویا بین بریڈنگ سائنٹسٹ مقدس سلیم نے کہا جیسا کہ ہم جانتے ہیں کہ پاکستان کے تیل کے بیجوں کا درآمدی بل بڑھ رہا ہے۔ ہم اربوں ڈالر کی درآمد کر رہے ہیں۔ اگر ہم مقامی طور پر سویا بین پیدا کریں تو ہم تیل کے بیجوں کی درآمد کے چیلنج سے نمٹ سکتے ہیں۔ اس کے علاوہ چین امریکہ سے سویا بین کا سب سے بڑا درآمد کنندہ ہے۔ اگر ہم اپنے ملک میں سویا بین مقامی طور پر پیدا کرتے ہیں، تو ہمیں سویا بین درآمد کرنے کے بجائے چین کو برآمد کرنے کا موقع مل سکتا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں